اوورسیز پاکستانی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی ،لیکن حکومتی پالیسیوں نے جینا محال کر دیا ہے: چوہدری امجد رولیہ

اٹلی (رپورٹ:شیراز علی)دیارِغیر میں رہنے والے پاکستان سے انتہا کی محبت کرتے ہیں اور اپنے وطن کی خوشحالی اور ترقی چاہتے ہیں‘زرمبادلہ پاکستان بھیج کر ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کا کردار تو ادا کر رہے ہیں لیکن حکومتی ناکام پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان میں عام آدمی کی زندگی اجیرن ہو چکی ہے‘ سفید پوش طبقہ دو وقت کی روٹی سے محروم ہو چکا ہے‘والدین بچوں سمیت خود کشیاں کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں۔ حکومت کو ایسی پالیسی ترتیب دینی چاہیے جس سے مستحق افراد تک ان کا حق پہنچ سکے‘ اوورسیز پاکستانیوں کے ساتھ اپنے ہی وطن میں ہونے والے سلوک سے سمندر پار پاکستانیوں میں مایوسی پھیلی ہے۔ صاحب ثروت حضرات کو آگے بڑھ کر عید الاضحی کے موقع پر غریب بہن بھائیوں کی مدد کرنی چاہیے۔ ان خیالات کا اظہار چیف ایگزیکٹو چکن اینڈ ٹیسیٹ اٹلی اور سرپرست روزنامہ جذبہ ڈاٹ کام چوہدری امجد حسین رولیہ نے عارف علی عارف سے ٹیلیفونک گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا کے مثبت کردار کی جتنی آج ضرورت ہے شائد اس سے پہلے نہ تھی۔ حکومتی ناکامیوں اور عام آدمی کی زندگی کو بہتر بنانے کیلئے ان کے حل کیلئے پروگرام کا انعقاد ہونا چاہیے‘ الیکشن کے دنوں میں ووٹ کیلئے گاؤں‘ گاؤں‘ گلی‘گلی اور ایک ایک گھر تک جانے والوں کو چاہیے کہ وہ آگے بڑھیں مصیبت کی ان گھڑیوں میں ایسے خاندانوں کی مدد کریں‘ سفید پوش طبقہ کی حالت ِ زار دیکھ کر دل خون کے آنسو روتا ہے‘ والدین کی معصوم جانوں کے ساتھ خود کشیاں ہمارا ملک کس طرف جا رہا ہے‘ حکومت کو اپنی ذمہ داری ہر صورت قبول کرنا ہو گی وہ کسی طور پر اس سے بری الذمہ نہیں ہو سکتا۔چوہدری امجد حسین رولیہ نے کہا کہ اوورسیز پاکستانیوں کے اپنے ہی وطن میں مسائل بڑھ رہے ہیں‘ حکمرانوں کی طرف سے سمندر پار پاکستانیوں کو بہترین سہولیات دینے کا راگ تو الاپا جاتا ہے لیکن عملی طور پر اس کے برعکس ہے۔ حکومت کو اس طرف خصوصی توجہ دینی چاہیے ورنہ ان کا بھی اعتماد کھو دینگے۔ عیدالاضحی کا موقع ہر صاحب ثروت افراد آگے بڑھیں یہ وقت ہے اپنے بہن بھائیوں کے کام آنے کا ان کے آنسو پوچھنے اور داد رسی کرنے کا‘ ہماری دعا ہے اللہ تعالیٰ ہمارے ملک کو ہمیشہ قائم و دائم رکھے (آمین)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں