ملک بھر میں 75 واں جشن آزادی ملی جوش و جذبے سے منایا گیا

ملک بھر میں پاکستان کا 75 واں جشن آزادی قومی جوش و جذبے کے ساتھ منایا گیا، مختلف شہروں میں سرکاری اور نجی سطح پر تقریبات منعقد ہوئیں جس میں شہریوں کی بڑی تعداد سبز ہلالی پرچم تھامے شریک ہوئی۔
پاکستان کا قیام 14 اگست 1947ء کو عمل میں آیا تھا، قوم ہر سال اس دن کو ملی جوش و جذبے کے ساتھ مناتی ہے، اس موقع پر مختلف تقریبات کا انعقاد کیا جاتا ہے، اہم عمارتوں پر چراغاں کے ساتھ قومی پرچم سربلند ہوتے ہیں، شہری بھی اپنی املاک اور گاڑیوں پر قوم پرچم آویزاں کرتے ہیں۔
جشن آزادی کی مناسبت سے گلیوں اور محلوں کو جھنڈیوں اور جھنڈوں سے سجایا گیا جبکہ بچوں سمیت تمام عمر کے لوگوں نے اپنے سینے پر بیج بھی سجائے، شہر شہر چراغاں اور شاندار آتش بازی کا بھی اہتمام کیا گیا۔
یوم آزادی کے دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت میں 31 اور صوبائی دارالحکومتوں میں 21 توپوں کی سلامی سے ہوا،نماز فجر کے بعد مساجد میں ملک میں امن، یکجہتی اور خوشحالی کیلئے خصوصی دعائیں مانگی گئیں جب کہ دیگر مذاہب کی عبادت گاہوں میں بھی خصوصی دعائیہ تقریبات کا اہتمام کیا گیا۔
جشن آزادی کی مناسبت سے مرکزی تقریب کنونشن سینٹراسلام آباد میں ہوئی۔ تقریب میں وزیرِ اعظم شہباز شریف مہمانِ خصوصی تھے، جنہوں نے قومی پرچم بلند کیا۔ اس موقع پر اہم سیاسی ، سفارتی اور سماجی شخصیات نے شرکت کی۔
وفاقی دارالحکومت سمیت ملک بھر میں پرچم کشائی کی تقریبات کا اہتمام کیا گیا جس میں اس عزم کا اعادہ کیا گیا کہ وطن عزیز کو موجودہ بحران سے نکال کر ایک مرتبہ پھر عالمی برادری میں اپنا کھویا مقام بحال کریں گے۔
مختلف ملکوں میں جشن آزادی کی تقاریب
دنیا بھر میں پاکستانی سفارت خانوں اور قونصل خانوں میں بھی جشن آزادی کی مناسبت سے تقاریب کا اہتمام کیا گیا۔ ان تقاریب میں سفارتی عملے کے علاوہ وہاں آباد پاکستانی شہریوں اور دیگر معززین نے شرکت کی۔
مزار قائد پر گارڈز کی تبدیلی
75ویں جشن آزادی کی مناسبت سے بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے مزار پر گارڈز کی تبدیلی کی پروقار تقریب منعقد ہوئی۔ اس موقع پر پاکستان نیول اکیڈمی کے کیڈٹس نے اعزازی گارڈز کی ذمہ داریاں سنبھال لیں۔
مزار اقبال پر گارڈز کی تبدیلی
لاہورمیں پاکستان کے 75 ویں جشن آزادی کے موقع پر مزار اقبال پر گارڈز کی تبدیلی کی پروقار تقریب کا انعقاد کیا گیا۔
پاکستان آرمی کے چاک و چوبند دستے نے اعزازی گارڈ کے فرائض سنبھال لئے۔ مزار اقبال پر پنجاب رینجرز کی جگہ پاکستان آرمی کے دستے نے ذمہ داری سنبھال لیں۔
سب سے بڑا پرچم تیار کرنیوالے شیخ نثار
پاکستان کا سب سے بڑا جھنڈا بنانے والے شیخ نثار نے ایک کلومیٹر طویل قومی پرچم تیار کرنے کی خواہش ظاہر کردی۔ سماء سے بات کرتے ہوئے شیخ نثار پرچم والا نے بتایا کہ جب یہ کام شروع کیا تو پہلے صرف کپڑوں کا کاروبار تھا، لوگوں کو دیکھا کہ 14 اگست سے قبل پرچم کی تیاری میں بنیادی رموز کا خیال نہیں رکھا جاتا تھا اور عجیب بے ہنگم پرچم تیار ہوتا تھا، اس کے بعد پرچم کی تیاری شروع کرنے کا خیال آیا۔
یوم آزادی پر قیدیوں کی سزاؤں میں کمی
صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے جیلوں میں سزا کاٹنے والے قیدیوں کی سزاؤں میں کمی کا اعلان کردیا۔ صدر نے 65 سال یا اس سے زائد عمر کے مرد قیدی جو 15 سال يا اس سےزیادہ قید کاٹ چکے ہیں اُن کیلئے بقیہ سزا میں مکمل چھوٹ کا اعلان کیا ہے۔ 60 سال یا اس سے زائد عمر کی خواتین جو 10 سال یا اس سے زیادہ قید کاٹ چکی ہیں کیلئے بقیہ سزا میں مکمل چھوٹ کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔
نمایاں خدمات انجام دینے والی اہم شخصیات کیلئے سول اعزازات کا اعلان
صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے یوم آزادی پاکستان کی ڈائمنڈ جوبلی کے موقع پر متعلقہ شعبوں میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرنے پر 253 پاکستانی اور غیرملکی شہریوں کو نشان امتیاز، ہلال پاکستان، ہلال شجاعت، ہلال امتیاز، ہلال قائداعظم، ستارہ پاکستان، صدارتی اعزازات برائے حسن کارکردگی، تمغہ پاکستان، تمغہ شجاعت، تمغہ امتیاز، تمغہ قائداعظم اور تمغہ خدمت عطاء کرنے کا اعلان کردیا۔
یہ اعزازات 23 مارچ 2023ء کو یوم پاکستان کے موقع پر منعقدہ ایک پروقار تقریب کے دوران دیئے جائیں گے۔
وزیراعظم کا خطاب
وزیراعظم شہباز شریف نے قوم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج محض ایک مبارکباد کافی نہیں، یقیناً ہم ہر سال بڑی دھوم دھام اور خوشی سے یوم آزادی مناتے ہیں، یوم پاکستان مناتے ہیں، یوم قائد مناتے ہیں، یوم اقبال مناتے ہیں لیکن حقیقت یہ ہے کہ پچھلے 75 برس میں ہم نے ان دنوں کو محض منایا ہے، مگر ان کے اصل مقاصد کو اپنایا نہیں، پاکستان کو ایسا نہیں بنایا جسے دیکھ کر خود ہمارا دل یہ گواہی دے کہ قائد اور لاکھوں شہداء کی روحیں مطمئن اور آسودہ ہوں گی، اسی لئے یوم آزادی کے موقع پر میرا دل مسرور بھی ہے اور بے چین بھی۔
وزیر اطلاعات کا پیغام
وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے پاکستان کی 75 ویں سالگرہ پر ملک میں محبت اور برداشت کے کلچر کو فروغ دینے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی پرچم ہمارے اتحاد کی علامت ہے، ہم سب ایک ہیں، نفرت، تقسیم اور فساد پھیلانے کی ہر کوشش کو ناکام بنائیں گے، آج پوری قوم پاکستان کی ڈائمنڈ جوبلی منارہی ہے، ملک کی خاطر جانوں کا نذرانہ پیش کرنے والے مسلح افواج، پولیس اور سیکورٹی اداروں کے اہلکاروں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔
دوبارہ ریکارڈ کئے گئے قومی ترانہ جاری
75ویں جشن آزادی کے موقع پر دوبارہ ریکارڈ کیا گیا قومی ترانہ ریلیز کر دیا گیا ہے۔ 13 ماہ کے طویل عرصے میں ریکارڈ کئے گئے قومی ترانے میں 155 گلوکاروں نے حصہ لیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں