برطانیہ میں مہنگائی کا 40 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا‘ شرح 9.1 فیصد

لندن (آئی این پی) برطانیہ میں مہنگائی کا 40 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا۔ مہنگائی کی شرح 9.1 فیصد پر ریکارڈ کی گئی۔خبر ملکی رساں ایجنسی کے مطابق کھانے پینے کی اشیا اور توانائی کی قیمتوں میں اضافہ سے عوام پریشان ہے۔ ماہرین نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ رواں سال کے آخر تک مہنگائی کی شرح 11 فیصد تک پہنچ سکتی ہے جس سے برطانیہ معاشی بحران کا شکار ہو سکتا ہے۔برطانوی مرکزی بینک کا کہنا ہیکہ کوویڈ کے دوران معیشت کو شدید نقصان پہنچا جبکہ دوسری جانب یوکرین جنگ کی وجہ سیتوانائی کی قیمتوں میں اضافہ ہو گیا۔ اس کے علاوہ ٹرانسپورٹ اور مشینری کے اخراجات بھی بڑھے ہیں۔ ویلیو ایڈڈ ٹیکس کی شرح واپس 20 فیصد پر آنے سے ریسٹورنٹس میں بھی اشیا مہنگی ہوئی۔مہنگائی کے خلاف ملک بھر میں ہڑتالوں کا نیا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ ریلوے کے بعد فضائی کمپنیوں کیعملے نے بھی ہڑتال کا اشارہ دے دیا۔ برٹش ائیرویز کے عملے نے تنخواہوں میں اضافے کیلئے ہڑتال کی حمایت کی۔ ٹرین یونین جی ایم بی نے برٹش ائیرویز عملے کی جانب سے ہڑتال کی حمایت کی تصدیق کی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں