اعلیٰ تعلیم کے شعبہ میں نیابحران، لاکھوں طلباء و اساتذہ کا مستقبل خطرے میں

گجرات(وقائع نگار) نجی جامعات کا اجلاس۔ آٹا اور چینی کے بعد پنجاب میں اعلیٰ تعلیم کے شعبے میں نیا بحران۔ پنجاب میں لاکھوں طلبا و اساتذہ کا مستقبل خطرے میں۔ پنجاب میں اعلیٰ تعلیم زوال پذیر۔ فروغ تعلیم کے وسیع تر مفاد میں پنجاب بھر کی نجی جامعات کا اہم اجلاس یونیورسٹی آف لاہور آف رائے ونڈ روڈ منعقد ہوا۔ اجلاس میں پنجاب کی پرائیویٹ یونیورسٹیز کے مالکان اور اعلیٰ انتظامی عہدیداران نے شرکت کی۔ اجلاس میں حکومت کی تعلیم دشمن پالیسیوں پر اظہا تشویش کرتے ہوئے قرار دیا گیا کہ اعلیٰ تعلیم کے میدان میں اختیار کی گئی سرکاری سوچ میں مثبت و تعمیری تبدیلی کی فوری ضرورت ہے۔ اجلاس کے شرکاء نے اس بات پر اتفاق کیا کہ اعلیٰ تعلیم کے معاملہ میں منفی حکومتی پالیسیاں جاری رہیں تو نجی یونیورسٹیوں کو تالے لگ جائیں گے۔ اس سے لاکھوں طالب علموں اور ہزاروں اساتذہ کا مستقبل تاریک ہو جائے گا۔ نجی شعبے میں کام کرنے والی جامعات کے مالکان ا ور اعلیٰ تنظیمی عہدیداران کے اجلاس میں نجی جامعات کی ایسوسی ایشن کے قیام کا فیصلہ کیا گیا۔ معروف ماہر تعلیم ڈاکٹر پروفیسر چودھری عبدالرحمان کو ایسوسی ایشن کا صدر اور میاں عمران مسعود کو سپوکس پرسن (ترجمان) منتخب کیا گیا۔ ایسوسی ایشن کا نصب العین وطن عزیز کو اعلیٰ تعلیم کے میدان میں عالمی سطح پر قائدانہ کردار کے لیے تیار کرنا قرار دیا گیا۔ ایسوسی ایشن کے بنیادی چارٹر میں درج ذیل نکات پر اتفاق کیا گیا۔ (1) اعلیٰ تعلیم کے حصول کو طلباء و طالبات کی آسان دسترس میں لانے کے اقدامات اٹھانا۔ (2) اعلیٰ تعلیم کے معیار کو بہتر سے بہتر بنانے کی حکمت عملی ترتیب دینا۔ (3) اعلیٰ تعلیمی نظام میں موجود بے قاعدگیوں کو ختم کرنے کا لائحہ عمل ترتیب دینا۔ (4) حکومت کی تعلیم دشمن پالیسیوں کی اصلاح کے لیے نتیجہ خیز کوششوں کو بروئے کار لانا۔ (5) نجی تعلیمی شعبے میں اربوں روپے کی سرمایہ کاری کرنے والے مالکان کے جائز مطالبات کو کسی تاخیر کے بغیر تسلیم کرانا۔ اجلاس میں طے کیا گیا کہ نجی جامعات کے چارٹر آف ڈیمانڈ کو بہت جلد حکومتی ذمہ داران کے سامنے رکھا جائے گا۔ اجلاس کے شرکا ء نے امید ظاہر کی کہ حکومتی سطح پر تشکیل دی جانے والی تعلیمی پالیسیوں و ترجیحات میں نجی جامعات سے مشاورت کی جائے گی اور حکومتی سطح پر اعلیٰ تعلیم کے نجی شعبے کی خدمات کو تسلیم کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں