برطانوی نژاد25 سالہ پاکستانی لڑکی کی پراسرار موت

لاہور(جے ایم ڈی)لاہور میں مقیم 25 سالہ برطانوی نژاد پاکستانی لڑکی کی پراسرار موت، دو ماہ قبل برطانیہ سے آنے والی ماہرہ ڈیفنس میں اپنی دوست کے ساتھ رہائش پذیر تھی۔ آج دوپہر ملازمہ صفائی کے لیے کمرے میں داخل ہوئی تو ماہرہ کی لاش بیڈ پر پڑی تھی، پولیس کے مطابق لڑکی کو گلا دباکر اور سر میں گولی مار کر قتل کیا گیا ہے۔
ابتدائی تفتیش میں زیادتی یا ڈکیتی میں مزاحمت کے شواہد نہیں ملے ، مقتولہ کے والدین اور بہن بھائی لندن میں رہتے ہیں۔پولیس کےمطابق دن 12 بجے ملازمہ صفائی کے لیے کمرے میں آئی تو بیڈ پر ماہرہ کی لاش پڑی تھی جسے گلا دبا کر اور سر میں گولی مار کر قتل کیا گیا تھا۔اطلاع ملنے پر پولیس اور فرانزک ٹیموں نے موقع پر پہنچ کر شواہد محفوظ کر لیے۔ ذرائع کے مطابق مقتولہ کی نانی پاکستان میں جبکہ والدین اور دو بہن بھائی لندن میں رہتے ہیں۔مقتولہ دو ماہ قبل پاکستان آئی تھی اور بالائی منزل پر مقیم تھی۔ پولیس کے مطابق زیادتی یا ڈکیتی میں مزاحمت پر قتل کے کوئی شواہد نہیں ملے ، لاش پوسٹ مارٹم کے لیے بھیج دی ہے، اصل صورتحال پوسٹ مارٹم رپورٹ میں سامنےآئے گی۔پولیس کے مطابق واقعے کی مختلف پہلوؤں سے تحقیقات کی جارہی ہیں، برطانوی نژاد پاکستانی لڑکی کے قتل کے مقدمے میں نامزد 2 ملزمان سمیت 4 افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے ۔مدعی مقدمے کا کہنا ہے کہ ماہرہ ذوالفقار کو اس کے دوستوں ظاہر جدون اور سعد امیر بٹ نے قتل کیا ہے۔مقدمے کے مدعی کا کہنا ہے کہ نامزد ملزمان مقتولہ ماہرہ ذوالفقار سے شادی کرنا چاہتے تھے۔ماہرہ ذوالفقار کے پوسٹمارٹم کی ابتدائی رپورٹ جاری کردی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ماہرہ کی گردن کے نزدیک گولی لگی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں