پاکستانی علماء کے وفد کی افغان وزیراعظم ملا محمد حسن اخوند سے ملاقات

افغانستان کے دورے پر موجود پاکستانی علماء کے وفد نے کابل میں افغان عبوری وزیراعظم مُلا محمد حسن اخوند سے ملاقات کی جس میں دو طرفہ تعلقات پر تفصیلی بات چیت کی گئی۔
پاکستانی علماء کے وفد نے معروف عالم دین مفتی تقی عثمانی کی قیادت میں کابل میں افغان عبوری وزیراعظم ملا محمد حسن اخوند سے ملاقات کی۔
ملاقات میں افغان وزیر تعلیم، چیف جسٹس اور دیگر اعلیٰ حکام بھی شریک ہوئے۔ ملاقات کے دوران پاک افغان دو طرفہ تعلقات پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا
واضح رہے کہ افغانستان کے دارالحکومت کابل میں پاکستانی حکومت اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے درمیان گزشتہ کئی ماہ سے جاری مذاکرات کا سلسلہ پھر شروع ہوگیا ہے۔
پاکستانی مذہبی اور قبائلی رہنماؤں کا وفد گزشتہ روز 25 جولائی کی شام کو وفاقی دارالحکومت اسلام آباد سے بذریعہ ہوائی جہاز افغان دارالحکومت کابل پہنچا۔ پاکستانی وفد مفتی تقی عثمانی کی سربراہی میں افغانستان کے دارالحکومت کابل موجود ہے۔
مفتی تقی عثمانی کا کہنا تھا کہ وہ افغان حکومت کی دعوت پر یہ دورہ کر رہے ہیں، جہاں افغان وزیراعظم، وزیر داخلہ ، وزیر تعلیم سمیت دیگر اعلیٰ حکام سے امدادی کام ، تعلیم اور اسلامی اقتصاد پر بات چیت کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے۔
علاوہ ازیں صدر مملکت ڈاکٹڑ عارف علوی نے افغانستان جانے والے وفد میں شامل مفتی تقی عثمانی سے ٹیلیفونک رابطہ کر کے افغانستان کے طلبہ کو تعلیمی سہولیات فراہم کرنے کی پیشکش کی ہے۔
ایوان صدر کے اعلامیے کے مطابق صدر مملکت نے افغان طلبہ کو آن لائن تعلیمی سہولیات اور ورچوئل یونیورسٹی کےذریعے تعلیمی سہولیات کی پیشکش کا اعادہ کیا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں