گجرات فلور ملوں کا کوٹا بڑھایا جائے،خانیوال سے آنیوالی گندم ناقص ہے، گجرات فلور ملز ایسوسی ایشن

گجرات(نمائندہ خصوصی) گجرات فلور ملز ایسوسی ایشن کا ماہانہ اجلاس صدر محمد نواز بٹ کی صدارت میں لوف اینڈ لیف ریسٹورنٹ میں ہوا جس میں ممبران کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ اس موقع پر سابق چیئرمین آل پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن ریجن پنجاب چوہدری افتخار احمد مٹو نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ضلعی حکومت گجرات سنٹر پر دیسی گندم کا بندوبست کرے تاکہ امپورٹڈ گندم کے ساتھ ملا کر آٹا تیار کیا جا سکے۔ گجرات کے سنٹرو ں میں گندم نہیں ہے جس کی وجہ سے بہت مسائل پیچیدہ ہو چکے ہیں۔ خانیوال سے گندم منگواتے وقت تین چار دن لگ جاتے ہیں اور اس کی کوالٹی بھی ناقص ہے۔ انہوں نے کہا کہ گندم سے ہی آٹا بنتا ہے۔ خانیوال اور امپورٹڈ گندم ملا کر جب آٹا تیار کیا جاتا ہے تو اُس کا معیار بھی ٹھیک نہیں ہوتا۔ ان کا کہنا تھا کہ ملوں کو بھی اضافی اخراجات پڑ جاتے ہیں اور گورنمنٹ کی طرف سے 2 گھنٹے کا کوٹہ دیا جارہا ہے جو کہ ناکافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ گجرات میں آبادی کے لحاظ سے کوٹے میں اضافہ کیا جائے۔صدر محمد نواز بٹ نے کہا کہ امپورٹڈ گندم بھی کمزور ہے اور جو خانیوال سے گندم منگوائی جا رہی ہے اس کو آتے تین چار دن لگ جاتے ہیں۔ ضلعی گورنمنٹ گجرات فلور ملز ایسوسی ایشن کے مطالبات پر غور کرے۔ ہم نے ہمیشہ ضلعی حکومت سے تعاون کیا ہے اور کرتے رہیں گے۔ میٹنگ میں چوہدری لیاقت علی چاڑ، مبشر احمد ڈار، چوہدری مظہر وڑائچ، فیاض چیمہ(ذکریا فلور ملز)، چوہدری صفدر، معاذ خان، احمد حسن مٹو، چوہدری الیاس (نگینہ فلور ملز)، چوہدری عثمان پرویز، سلیمان جاوید، ارتضیٰ، چوہدری ارسلان پرویز سمیت دیگر ممبران کی بڑی تعداد موجود تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں