وزیر اعظم کا آڈیو لیکس کی تحقیقات کے لئے کمیٹی بنانے کا اعلان

وزیراعظم شہباز شریف نے آڈیو لیکس کی تحقیقات کے لئے کمیٹی بنانے کا اعلان کردیا۔
اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران وزیر اعظم نے شنگھائی تعاون تنظیم کےسربراہی اجلاس اور دورہ برطانیہ و امریکا سے متعلق آگاہ کیا۔
وزیر اعظم نے کہا کہ ان کی شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہی اجلاس میں چین اور روس کے صدور سے ملاقاتیں ہوئی، اقوام متحدہ کے اجلاس کے دوران بھی عالمی رہنماؤں سے ملاقاتیں ہوئیں، امریکی صدر جوبائیڈن سے ملاقات میں پاکستان سے ہمدردری اور امداد پر شکریہ ادا کیا، اس دوران بلاول بھٹو زرداری ، شیری رحمان اور مریم اورنگزیب کی بھرپور معاونت شامل تھی۔
وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ ملک میں سیلاب کی وجہ سے 30 ارب ڈالر تک تباہ کاریاں ہوئی ہیں، کاربن کے اخراج میں پاکستان کا حصہ ایک فیصد سے بھی کم ہے، عالمی رہنماؤں نے پاکستان کے ساتھ اظہار ہمدردی اور تعاون کی یقین دہانی کرائی۔ہم نے مسئلہ کشمیر اور فلسطین کے حوالے سے بھرپور مؤقف پیش کیا، بھارت میں مسلمانوں کے ساتھ ناروا سلوک کی بھرپور مذمت کی۔
وزیر اعظم نے کہا کہ روسی صدر سے باہمی تعلقات کی بات کی گئی، روس کے صدر نے کہا کہ ہم آپ کے ساتھ ٹریڈ کے لئے تیار ہیں۔
پاکستان آئسولیشن سے نکل آیا
تحریک انصاف کی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ سابق دور میں خارجہ پالیسی کا بیڑا غرق کیا گیا، دوست اور برادر ممالک کو ناراض کیا اور اس بات کا میں گواہ ہوں۔ پاکستان مخلوط حکومت کی کاوشوں سے آئسولیشن سے نکل آیا، دشمن ہماری طرف میلی آنکھ سےنہیں دیکھ سکتا۔
آڈیو لیکس پر کمیٹی بنارہا ہوں
آڈیو لیکس سے متعلق وزیر اعظم نے کہا کہ آڈیولیکس کامعاملہ بہت سنجیدہ ہے، اس طرح کے سیکیورٹی بریچ بہت بڑا سوالیہ نشان ہیں، یہ وزیراعظم ہاؤس کی نہیں ریاست پاکستان کے وقارکی بات ہے، اس معاملے پر کمیٹی بنارہا ہوں، جو اس معاملے کی تہہ تک پہنچےگی، حقائق عوام کے سامنے رکھیں گے۔
مریم نواز کے داماد نے آدھی مشینری عمران خان دور میں منگوائی
وزیر اعظم نے کہا کہ مریم نواز نے مجھ سے اپنے داماد کے لیے سفارش کا نہیں کہا، مریم نواز نے مشینری مریم نواز کے داماد نے آدھی مشینری عمران خان دور میں منگوائی تھی، اگر کوئی فیور دی ہے تو جو سزا دیں گے قبول کرلوں گا۔
عمران نیازی نے جھوٹے کیسز بنائے
وزیر اعظم نے کہا کہ عمران نیازی نے اپوزیشن پر جھوٹے کیسز بنائے، عمران خان نے بشیر میمن کو بلا کر کہا کہ ان پر مقدمے کرو، تم الٹے ہوگئے لیکن کرپشن کاکوئی الزام ثابت نہیں کرسکے، این سی اے میں 2 سال کیس کے بعد مجھے کلین چٹ ملی۔
عمران خان کے حوالے سے وزیر اعظم نے کہا کہ چار سال میں انہوں نے پاکستان کو تباہ وبرباد کر دیا، یہ شخص پاکستان کے وجود کے لئے بہت بڑا خطرہ ہے، خدانخواستہ یہ شخص ملک کوتباہی کے دہانے پر نہ لے جائے۔
وزیر اعظم نے کہا کہ عمران دور میں خاتون کو وزیراعظم ہاؤس میں حبس بے جا میں رکھا گیا، چیئرمین نیب کو بلیک میل کر کے کیسز ختم کرائے گئے، ہر چیز انہوں نے خود کی اور الزام ہم پر لگایا گیا۔
وزیر اعظم نے مزید کہا کہ گھڑیاں بیچ کر پیسے جیب میں ڈال لیے گئے، چینی ایکسپورٹ کرنے کا اربوں روپے کا غبن ہے، تحقیقاتی کمیشن کی رپورٹ کہاں ہے؟، بلین ٹری کہاں گیا، پشاور میٹرو میں اربوں روپے کھائے گئے، شوکت خانم اسپتال کا پیسہ اپنی سیاست کے لئے استعمال کیا گیا، این سی اے کا بند لفافہ کابینہ سے منظور کروالیا گیا، افواج کو بھی تقسیم کرنے کی کسر نہیں چھوڑی۔
حکومت پر ہونے والی تنقید پر وزیر اعظم نے کہا کہ ہم آئینی طور پر اقتدار میں آئے ہیں اور قوم کی خدمت کررہےہیں، ہم نے 2 ماہ پہلے کہا تھا کہ روس سے سستی گندم لینےکیلئے تیار ہیں، ہم نے گندم امپورٹ کرکے اربوں روپے بچائے، میں اگر باہر مانگنے جاتا ہوں تو یہ کیا تجوریاں لے کر جاتے تھے؟

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں