مریم اورنگزیب کو لندن میں ہراساں کرنے والوں کے نائیکوپ اور پاسپورٹ منسوخ کرنے پر غور

وفاقی وزارت داخلہ لندن میں مریم اورنگزیب سے بدتمیزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کيلئے متحرک ہوگئی ہے۔
اتوار 25 ستمبر کو وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب کو پاکستانی اور پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں نے لندن میں ہراساں کیا تھا۔
ویڈیوز میں اِن افراد نے تحریک انصاف کے پارٹی پرچم گلے میں پہنے ہوئے تھے اور وہ اپنے موبائل فونز سے اس واقعے کی ویڈیو بھی بناتے رہے۔
مرد اور خواتین پر مشتمل اس جتھے نے مریم اورنگزیب کے لئے نازیبا الفاظ استعمال کئے، ان پر آوازیں کسیں اور گھٹیا ناموں سے پکارا۔ اس سارے واقعے کے دوران مریم اورنگزیب خاموش رہیں۔
واقعے کی وڈیوز سوشل میڈیا پر آنے کے بعد ہر سطح پر مریم اورنگزیب سے اظہار یکجہتی کیا گیا اور اس سارے عمل کی مذمت کی گئی۔
وفاقی وزارت داخلہ اس سارے عمل میں حصہ لینے والوں کے خلاف سخت کارروائی کيلئے متحرک ہوگئی ہے اور اس معاملے میں ملوث 14 پاکستانیوں کا ڈیٹا حاصل کر لیا ہے۔
وزارت داخلہ نے فیصلہ کیا ہے کہ مریم اورنگ زیب کو ہراساں کرنے والوں کے پاکستان سے جاری تمام کریکٹر سرٹیفکیٹ منسوخ کر دیئے جائیں گے۔
اس کے علاوہ ان افراد کے نائیکوپ اور پاسپورٹ منسوخ کرنے پر بھی غور کیا جا رہا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں